Notification texts go here Contact Us Buy Now!

Best Poetry On Sham In Urdu | Sham Poetry

Poetry On Sham In Urdu, dhalti shaam poetry, udas sham poetry, shaam dhalay poetry, Romantic shaam shayari, sham ki chai poetry, 2 line shaam shayari.
Kawish Poetry

 Poetry On Sham In Urdu



Poetry On Sham In Urdu



Bs ek sham ka har sham intezar rha
Magr wo sham kesi sham bhi nahi aai

بس اِک شام کا ہر شام انتظار رہا
مگر وہ شام کسی شام بھی نہیں آئی



 

Hoty hi shaam jalny laga yaad ka alaao
Aansu sunane dukh ki kahani nikal pade

ہوتے ہی شام جلنے لگا یاد کا الاؤ
آنسو سُنانے دُکھ کی کہانی نکل پڑے


sham poetry



Sham se un k tasawor ka nasha tha itna
Neend aai hay to aankhon ne bura maana hay

شام سے ان کے تصور کا نشہ تھا اتنا
نیند آئی ہے تو آنکھوں نے بُرا مانا ہے



Hoti hay sham aankh se aansu ravan hue
Ye waqt qaidiyon ki rihai ka waqt hay

ہوتی ہے شام آنکھ سے آنسو رواں ہوئے
یہ وقت قیدیوں کی رہائی کا وقت ہے

  


Dhalegi sham jahan kuch nazar na aaega
Phir is k bad bahot yaad ghar ki aaegi

‏ڈھلے گی شام جہاں  کچھ نظر نہ آئے گا
پھر اس کے بعد بہت یاد گھر کی آئے گی



Yoon to har sham umidon me guzar jati hay
Aaj kuch baat hay jo sham pe rona aaya

یوں تو ہر شام اُمیدوں میں گزر جاتی ہے
آج کچھ بات ہے جو شام پہ رُونا آیا



Kabhi to sham dhale apny ghar gae hoty
Kesi ki aankh me rah kar sanwar gae hoty

کبھی تو شام ڈھلے اپنے گھر گئے ہوتے
کسی کی آنکھ میں رہ کر سنور گئے ہوتے



Kab dhoop chali sham dhali kis ko khabar hay
Ek umar se main apny hi saae me khada hon

کب دھوپ چلی شام ڈھلی کس کو خبر ہے
اِک عمر سے میں اپنے ہی سائے میں کھڑا ہوں



Har khushi se khoobsorat teri sham kar don
Apna pyar aur dosti tery naam kar don
Mil jaaye agr dubara ye zindagi
Har bar main ye zindagi tery naam kar don

ہر خوشی سے خوبصورت تیری شام کردوں
اپنا پیار اور دوستی تیرے نام کردوں
مل جائے اگر دوبارہ یہ زندگی
ہر بار میں یہ زندگی تیرے نام کر دوں




Nahi subh par nazar hay magr aah ye bhi dar hay
Ye sahar bhi rafta rafta kahin sham tak na pahunche

نہیں صبح پر نظر ہے مگر آہ یہ بھی ڈر ہے
یہ سحر بھی رفتہ رفتہ کہیں شام تک نہ پہنچے


  

Sham hoti hay to lagta hay koi ruuth gaya
Aur shab usko manane me guzar jati hay

شام ہوتی ہے تو لگتا ہے کوئی روٹھ گیا
اور شب اس کو منانے میں گزر جاتی ہے



Kaun samjhy ham pe kiya guzri hay naqsh
Dil laraz uthta hay zikr e sham se

کون سمجھے ہم پہ کیا گزری ہے نقش
دل لرز اٹھتا ہے ذکرِ شام سے




Jab sham utarti hay, kiya dil pe guzarti hay
Sahil ne bahut pocha khamosh rha paani

جب شام اُترتی ہے، کیا دل پہ گزرتی ہے
ساحل نے بہت پوچھا خاموش رہا پانی



Bhigi hui ek sham ki dahliz pe baithy
Ham dil k sulagne ka sabab soch rahy hain

بھیگی ہوئی اِک شام کی دہلیز پہ بیٹھے
ہم دل کے سُلگنے کا سبب سوچ رہے ہیں




Aksar bhool bhi jata hon main tujhy
Sham ki chai mein, cheni ki tarah
Phir zindagi ka feekapan teri kami ka ehsas dilata hay

اکثر بھول بھی جاتا ہوں میں تجھے
شام کی چائے میں چینی کی طرح
پھر زندگی کا پھیکا پن تیری کمی کا احساس دلاتا ہے



Mujhy har pal tumhari hi talab rahti hay
Subah sham ki meri chai ho tum

مجھے ہر پل تمہاری ہی طلب رہتی ہے
صبح شام کی میری چائے ہو تم



kya shaam thi wo
kya barsaat thi wo
kya pal tha wo
aaya tha jo 
tujhe mere kareeb kar gayi jo
hamesha yaad aati hai sham wo
barsaat ke paani se bachne ke liye
sharma ke chotte se swar main
mujhse tera pehli baar baat karna 
baat karte samay chehre pe shikan aana
phir tera zara sa sharmana
aur apne honth ko daatho se kaatna
mere saath tera chalna 
chalte chalte takrana
aur wo bijli chamkne par
mera haath pakadna
aur phir sharmakar
meri aur dekh kar hasna
wo tumhare ghar pe tumhe chodna
mujhe chai pilane ki zid karna
chai ke saath wo baathe shaate
batho batho main raat ho jana
aur jate samay aapko ek aakhiri bar dekhna
aaj bhi wo haseen sham yaad hai

کیا شام تھی وہ
کیا برسات تھی وہ
کیا پل تھا وہ آیا تھا جو
تجھے میرے قریب کر گئی جو
ہمیشہ یاد آتی ہے شام وہ
برسات کے پانی سے بچنے کے لیے
شرما کے چھوٹے سے سور میں
مجھ سے تیرا پہلی بار بات کرنا
بات کرتے سمے چہرے پہ شِکن آنا
پھر تیرا ذرا سا شرمانہ
اور اپنے ہونٹ کو دانتوں سے کاٹنا
میرے ساتھ تیرا چلنا چلتے چلتے ٹکرانا
اور وہ بجلی چمکنے پر میرا ہاتھ پکڑنا
اور پھر شرما کر میری اور دیکھ کر ہنسنا
وہ تمہارے گھر پہ تمہیں چھوڑنا
مجھے چائے پلانے کی ضد کرنا
چائے کے ساتھ وہ بیٹھے شیٹھے باتوں باتوں میں
رات ہو جانا
اور جاتے سمے آپ کو آخری بار دیکھنا
آج بھی وہ حسیں شام یاد ہے

 

Saqiya ek nazar jaam se pahly pahly
Ham ko jaana hay kahin sham se pahly pahly

ساقیا اِک نظر جام سے پہلے پہلے
ہم کو جانا ہے کہیں شام سے پہلے پہلے