Notification texts go here Contact Us Buy Now!

Parveen Shakir Famous Poetry 2 Lines

Kawish Poetry

parveen shakir, parveen shakir poetry, parveen shakir best poetry, parveen shakir romantic poetry, parveen shakir poetry in urdu, parveen shakir husband, talking to oneself parveen shakir, inkār parveen shakir, parveen shakir famous poetry, parveen shakir ghazal, parveen shakir love poetry, poetry parveen shakir.

parveen shakir poetry in urdu two lines, love poetry by parveen shakir, shayari of parveen shakir, parveen shakir khushbu, urdu poetry parveen shakir, parveen shakir death, poetry of parveen shakir, parveen shakir son, shayari parveen shakir, parveen shakir quotes, parveen shakir sad poetry.

Parveen Shakir Poetry Romantic

parveen shakir

Ab kya dhundhte ho jale kaghaj ki rakh mein
vlwoh afsana hi jal gaya jiska unwan tum they

اَب کیا ڈھونڈتے ہو جلے کاغذ کی راکھ میں
وہ افسانہ ھی جل گیا جسکا عنوان تم تھے

Ek naam kya likha tera sahil ki ret par
Pher umar bhar hava se meri dushmani rahi

اِک نام کیا لکھا تیرا ساحل کی ریت پر
پھر عُمر بھر ھوا سے میری دشمنی رھی

Ab to is raah se woh shakhs guzarta bhi nahin
Ab kis umeed pe darvaze se jhanke koi

اب تو اس راہ سے وہ شخص گُزرتا بھی نہیں
اَب کِس اُمید پہ دروازے سے جھانکے کوئی

Ab kya dhundhte ho jale kaghaj ki rakh mein
vlwoh afsana hi jal gaya jiska unwan tum they

اَب کیا ڈھونڈتے ہو جلے کاغذ کی راکھ میں
وہ افسانہ ھی جل گیا جسکا عنوان تم تھے

Ek naam kya likha tera sahil ki ret par
Pher umar bhar hava se meri dushmani rahi

اِک نام کیا لکھا تیرا ساحل کی ریت پر
پھر عُمر بھر ھوا سے میری دشمنی رھی

Parveen Shakir Poetry in Urdu Two Lines

Ab to is raah se woh shakhs guzarta bhi nahin
Ab kis umeed pe darvaze se jhanke koi

اب تو اس راہ سے وہ شخص گُزرتا بھی نہیں
اَب کِس اُمید پہ دروازے سے جھانکے کوئی

Chalne ka hausla nahin rukna muhal kar diya
Ishq k is safar ne to mujhko nidhal kar diya

چلنے کا حُوصلہ نہیں رُکنا مُحال کر دیا
عشق کے اس سفر نے تو مجھ کو نِڈھال کر دیا

Ab bhi barsat ki raton mein badan tutta hay
Jaag uthti hain ajab khvahishen angdai ki

اب بھی برسات کی راتوں میں بدن ٹوٹتا ھے
جاگ اُٹھتی ھیں عجب خواہشیں انگڑائی کی

Itne ghane badal k piche
Kitna tanha hoga chand

اتنے گھنے بادل کے پیچھے
کتنا تنہا ہوگا چاند

Khud apne se milne ka to yaara na tha mujh mein
Main bhiid mein gum ho gai tanhai ke dar se

خُود اپنے سے ملنے کا تو یارا نہ تھا مُجھ میں
میں بھیڑ میں گُم ہو گئی تنہائی کے ڈر سے

Parveen Shakir Poetry Sad

Band kar ke meri aankhen vo shararat se hanse
Bujhe jane ka main har roz tamasha dekhun

بند کر کے میری آنکھیں وہ شرارت سے ہنسے
بُوجھے جانے کا میں ھر روز تماشہ دیکھوں

Dushmanon k sath mere dost bhi azad hain
Dekhna hay khinchta hay mujh pe pahla teer kaun

دشمنوں کے ساتھ میرے دوست بھی آزاد ھیں
دیکھنا ھے کھینچتا ھے مجھ پہ پہلا تیر کون

Raat k shayad aik baje hain
Sota hoga mera chand

رات کے شاید ایک بجے ھیں
سوتا ہوگا میرا چاند

Woh na aaega hamein maalum tha is shaam bhi
Intazar uska magar kuch soch kar karty rahy

وہ نہ آئیگا ھمیں معلوم تھا اس شام بھی
انتظار اسکا مگر کچھ سوچ کر کرتے رھے

Ham to samjhe they ki ek zakham hay bhar jaega
Kya khabar thi ki rag e jan mein utar jaega

ھم تو سمجھے تھے کہ اِک زخم ھے بھر جائیگا
کیا خبر تھی کہ رگِ جاں میں اُتر جائیگا

Kuch to hawa bhi sard thi kuch tha tera khayal bhi
Dil ko khushi ke saath saath hota raha malal bhi

کچھ تو ھوا بھی سرد تھی کچھ تھا تیرا خیال بھی
دل کو خوشی کے ساتھ ساتھ ھوتا رہا ملال بھی

Yun bichadna bhi bahut asan na tha us se magar
Jaate jaate uska vo mud kar dobara dekhna

یوں بچھڑنا بھی بہت آساں نہ تھا اس سے مگر
جاتے جاتے اسکا وہ مُڑ کر دوبارہ دیکھنا

Parveen Shakir Poetry sms

Bas yeh hua ki us ne takaluf se baat ki
Aur ham ne rote rote dupatte bhigo liye

بس یہ ھوا کہ اس نے تکلف سے بات کی
اور ہم نے روتے روتے دوپٹے بھگو لیے

Barha tera intazar kya
Apny khvabon mein ik dulhan ki tarah

بڑا تیرا انتظار کیا
اپنے خوابوں میں اِک دلہن کی طرح

Kuch to tere mausam hi mujhe raas kam aae
Aur kuch meri mitti mein baghavat bhi bahot thi

کچھ تو تیرے موسم ھی مجھے راس کم آئے
اور کچھ میری مٹی میں بغاوت بھی بہت تھی

Kamal e zabt ko khud bhi to azmaungi
Main apny hath se us ki dulhan sajaungi

کمالِ ضبط کو خُود بھی تو آزماؤنگی
میں اپنے ہاتھ سے اسکی دلہن سجاؤنگی

Bahut se log they mehman mere ghar lekin
Wo janta tha ki hay ehtimam kis liye

بہت سے لوگ تھے مہماں میرے گھر لیکن
وہ جانتا تھا کہ ھے اہتمام کس کیلئے

Main phool chunti rahi aur mujhe khabar na hui
Wo shakhs aa k mery shahr se chala bhi gaya

میں پُھول چُنتی رھی اور مجھے خبر نہ ہوئی
وہ شخص آ کے میرے شہر سے چلا بھی گیا

Ladkiyon k dukh ajab hote hain sukh us se ajeeb
Hans rahi hain aur kajal bhigta hay sath sath

لڑکیوں کے دکھ عجب ھوتے ھیں سکھ اس سے عجیب
ہنس رہی ھیں اور کاجل بھیگتا ھے ساتھ ساتھ

Aks e khushbu hoon bikharne se na roke koi
Aur bikhar jaun to mujhko na samete koi

عکسِ خوشبو ھوں بکھرنے سے نہ روکے کوئی
اور بکھر جاؤں تو مجھکو نہ سمیٹے کوئی

Ek suraj tha ki taron ke gharane se utha
aankh hairan hay kya shakhs zamane se utha

اِک سورج تھا کہ تاروں کے گھرانے سے اُٹھا
آنکھ حیران ھے کیا شخص زمانے سے اُٹھا

uske yoon tark e mohabbat ka sabab hoga koi
ji nahin ye manta vo bewafa pahle se tha

اُسکے یُوں ترکِ محبت کا سبب ہوگا کوئی
جی نہیں یہ مانتا وہ بے وفا پہلے سے تھا

pas jab tak woh rahy dard thama rahta hay
phailta jata hay phir aankh ke kajal ki tarah

پاس جب تک وہ رھے درد تھما رہتا ھے
پھیلتا جاتا ھے پھر آنکھ کے کاجل کی طرح

jis trah khvab mery ho gae reza reza
us trah se na kabhi tuut ke bikhre koi

جس طرح خُواب میرے ہو گئے ریزہ ریزہ
اُس طرح سے نہ کبھی ٹوٹ کے بکھرے کوئی

kanton mein ghire phool ko choom aaegi lekin
titli k paron ko kabhi chilte nahin dekha

کانٹوں میں گِرے پھول کو چوم آئیگی لیکن
تتلی کے پروں کو کبھی چِھلتے نہیں دیکھا

Heart Touching Parveen Shakir Poetry

Kaanp uthti hoon main ye soch k tanhai mein
Mery chehre pe tera naam na padh le koi

کانپ اُٹھتی ھوں میں یہ سوچ کے تنہائی میں
میرے چہرے پہ تیرا نام نہ پڑھ لے کوئی

Hath mere bhool baithe dastaken deny ka fan
Band mujh par jab se us k ghar ka darvaza hua

ہاتھ میرے بُھول بیٹھے دستکیں دینے کا فن
بند مُجھ پر جب سے اسکے گھر کا دروازہ ھوا

Maqtal e waqt mein khamosh gavahi ki trah
Dil bhi kaam aaya hay gum naam sipahi ki trah

مقتلِ وقت میں خاموش گواہی کی طرح
دل بھی کام آیا ھے گُمنام سپاہی کی طرح

Jang ka hathiyar tai kuch aur tha
Teer seeny mein utara aur hay

جنگ کا ہتھیار طے کُچھ اور تھا
تیر سینے میں اُتارا اور ھے

Palat kar phir yahin aa jaenge ham
Vo dekhe to hamein azad kar k

پلٹ کر پھر یہیں آجایئگے ھم
وہ دیکھے تو ہمیں آزاد کر کے

Shaam padte hi kesi shakhs ki yaad
Kucha e jaan mein sada karti hay

شام پڑتے ھی کسی شخص کی یاد
کُوچہِ جان میں صدا کرتی ھے

Tera ghar aur mera jangal bhigta hay sath sath
Aisi barsatein keh badal bhigta hay sath sath

تیرا گھر اور میرا جنگل بھیگتا ھے ساتھ ساتھ
ایسی برساتیں کہ بادل بھیگتا ھے ساتھ ساتھ

Aamad pe teri itr o charagh o subu na hon
Itna bhi bud o bash ko saada nahin kya

آمد پہ تیری عِطر و چراغ و سبُو نہ ھوں
اتنا بھی بُود و باش کو سادہ نہیں کیا

Rafaqaton k nae khvab khush numa hain magar
Guzar chuka hay tery etibar ka mausam

رفاقتوں کے نئے خُواب خوش نُما ہیں مگر
گُزر چُکا ھے تیرے اعتبار کا مُوسم


 • Amjad Islam Amjad Poetry


waqt e rukhsat aa gaya dil phir bhi ghabraya nahin
Usko ham kya khoenge jis ko kabhi paya nahin

و-قت رخصت آ گیا دل پھر بھی گھبرایا نہیں
اُس کو ہم کیا کھونگے جسکو کبھی پایا نہیں

Ajab nahin hay dil par jami mili kaai
Bahot dinon se to ye hauz saaf bhi na hua

عجب نہیں ھے کہ دل پر جمی ملی کھائی
بہت دنوں سے تو یہ ہوض صاف بھی نہ ھوا

Titliyan pakadne mein door tak nikal jana
Kitna acha lagta hay phool jaise bachon par

تتلیاں پکڑنے میں دُور تک نِکل جانا
کتنا اچھا لگتا ھے پھول جیسے بچوں پر

Raste mein mil gaya to sharik e safar na jaan
Jo chanv merban ho use apna ghar na jaan

رستے میں مل گیا تو شریکِ سفر نہ جان
جو چھاؤں مہرباں ھو اسے اپنا گھر نہ جان

Saba to kia k mujhe dhoop tk jaga na saki
Kahan ki neend utar aayi hay in aankhon mein

صبا تو کیا کے مجھے دُھوپ تک جگہ نہ سکی
کہاں کی نیند اتر آئی ھے ان آنکھوں میں

Shahr ko teri justju hy bahot
In dino ham pa guftgu hy bahot

شہر کو تیری جُستجُو ھے بہت
ان دنوں ھم پہ گفتگو ھے بہت

Jab se parvaaz k shreek mily
Ghar banany ki aarzo hy bahot

جب سے پرواز کے شریک ملے
گھر بنانے کی آرزو ھے بہت

Nam hain palkain teri ay moj e hawa raat k sath
Kya tujhe bhi koi yad aata hy barsaat k sath

نم ھیں پلکیں تیری اے موجِ ھوا رات کے ساتھ
کیا تجھے بھی کوئی یاد آتا ھے برسات کے ساتھ

Tu badlta hy to be sakhta meri aankhen
Apne hathon ki lakiroon se ulajh jati hain

تُو بدلتا ھے تو بے ساختہ میری آنکھیں
اپنے ہاتھوں کی لکیروں سے اُلجھ جاتی ھیں

پروین شاکر، پروین شاکر کی شاعری، پروین شاکر شاعری

۔۔